Sang-e-meel

"Roop Behroop"

SKU: 969353316X

Rs. 743.00 Rs. 990.00

اس ناولٹ میں مستنصر حسین تارڑ کا قلم کسی بگولے کی طرح ماضی، حال اور مستقبل میں سرگرداں ہے۔ روپ بہروپ میں ہماری ساری پرانی اورنئی تاریخ، باری باری کٹہرے میں کھڑی نظر آتی ہے۔ دریائے خون ہے جس میں ہم ڈو بتے اور ابھرتے ہیں اور نومیدی کے کسی ساحل پر جا نکلتے ہیں۔

 ہمارا ماضی، پیر تسمہ پا کی طرح، اپنی گرفت ڈھیلی نہیں کرتا ۔ ہماری ستر سالہ آزادی کی روداد، جو کہیں کا بوسہے کہیں فریاد، ہم اس سے، جسےیاد بھی نہیں رکھنا چاہتے  اور بھلا بھی نہیں سکتے، آباد بھی ہیں برباد بھی۔

،خوں چکاں اور ناانصافی پر بھی یہ ہماری کہانی ہے۔ کم زوروں کو ستانے ،قانون کو اپنے ہاتھ میں لینے کے  قصے دہشت گردی کے واقعات جو پشاور میں سکول کے بچوں اور استانیوں کے قتل عام پر ختم ہوتے ہیں ۔ ہم لوریاں  سنا کر اپنے ضمیر کو سلانا چاہتے  ہیںلیکن یہ لوریاں وقتاََفوقتاََ عفریتوں کے قہقہوں میں بدل جاتی ہیں۔ یہ فردِ جرم ہے جو مستنصر نے دکھی ہو کر لکھی ہے۔ یہ ناولت آئینہ ہے۔ اس میں گر اپنی صورت ٹیڑھی میڑھی نظر آتی ہے تو سوچنا چاہیے کہ ہمیں اپنا آپ بدلنے کی کتنی ضرورت ہے۔ آئینہ اٹھا کر پھینک دینے سے حقائق نہیں بدلا کرتے۔

محمد سلیم الرحمٰن

Title: "Roop Behroop"

Author: Mustansar Hussain Tarar

Subject: Novelette, Fiction

ISBN: 969353316X

Year: 2020

Language: Urdu

Number of Pages: 182

Customer Reviews

Based on 10 reviews
100%
(10)
0%
(0)
0%
(0)
0%
(0)
0%
(0)
M
Mahwish Talib
تفکّر اور تدبر کی حامل خوبصورت تحریر

روپ بہروپ اپنے آپ میں ایک بہروپ کہانی ہے۔۔۔۔ نور بی بی اور اس کا زرد گلاب۔۔۔۔ انسان امید کے سہارے ہی تو زندہ ہیں۔۔۔ اگر یہ بھی نہ رہے۔۔۔ کسی سے خیالوں میں بھی خوش ہونے کا حق چھین لیا جائے تو بندہ کہاں جائے۔۔۔۔
پھر ساجد، روپ بہروپ کی گُھپا، جونئیر ہیملٹ۔۔۔ سب ہی زندگی کے اترتے چڑھتے رنگوں پر حیران ہیں۔۔۔ کوئی نالاں ہیں تو کوئی خوفزدہ۔۔۔ اور پھر وہ بے جان سی دُرگا دیوی کا کردار خاصا دلچسپ ہے۔۔۔ تحریر میں جس طرح سے استعاروں اور تشبیہات کے ساتھ حقیقی واقعات کی منظر کشی کی گئ ہے۔۔ وہ بہترین ہے۔۔۔۔ البتہ مجھے اس ناولٹ میں ایک جگہ ذرا سا عِلمی اختلاف ہے۔۔۔ میں نے روپ بہروپ کا مطالعہ خلافِ معمول کافی وقت میں مکمل کیا اور اسکی وجہ سیالکوٹ کا وہ دل خراش سانحہ تھا جس نے مجھے رک کر حال ہی میں ہونے والی اس ٹریجڈی پر دکھ منانے اور فکرمند ہونے پر مجبور کر دیا۔۔۔۔ کتنے افسوس کی بات ہے آج سے ستّر دہائیاں پہلے چب مُلک پاؤں پاؤں کھڑا تھا۔۔۔ تب بھی خون و کشت کے واقعات جاری تھے۔۔۔ اور اب
وہ کہتے ہیں کہ اب عوام میں شعور آگیا ہے؟ کیا واقعی۔۔؟؟ ہم ابھی بھی فرقوں میں، ذات پاٹ میں بٹے ہوئے ہیں۔۔۔ اس شعور نے ہم سے انسانیت چھین لی ہے۔۔۔
اگر ہم لوگ باشعور ہیں تو پھر بے حس اور ناہنجار کون لوگ ہیں ۔۔۔ وہ جو بغیر کسی لحاظ کے ظلم کیے جاتے ہیں؟ یا وہ جو اس ظلم کو ہوتا دیکھ کر خاموشی سے اپنے کیمروں میں ریکارڈ کرتے ہیں؟؟

بہر حال، مستنصر حسین تارڑ صاحب میرے پسندیدہ مصنفین میں سے ایک ہیں۔۔۔۔ اور انہوں نے " ادب برائے زندگی" کیلئے لکھ کر ایک بار پھر کمال کیا ہے ۔۔۔

مزید برآں، اس کتاب کی کوالٹی زبردست ہے۔۔۔

M
M.Ali Ali
Fantastic

I have spend time with this book

U
Ubaid Sarwar
Impressive and informative

It’s a great book for life also support your mindset

T
Tahir Nadeem
A must read

Roop Behroop is truly showing us our face in a mirror which most people do not want to face.

A
Ali Abdullah

Roop Behroop

You may also like

Recently viewed